گیت نمبر ۲۷۷
1

بندہ منجی جہان غیر سے کیوں دُعا کرے
طالب نُور و زندگی سجدہ بُتوں کو کیا کرے
2

ابن ِ خُدائے مہرباں یسُوع ہے منجی جہاں
اُس کے سوا کوئی کہاں درد کی جو دوا کرے
3

بیٹے کو اپنے دے دیا دَہر پہ جو فدا ہوا
ہر اک بشر نہ کیوں بھلا شُکر خُدا ادا کرے
4

عشق ِ مسیحا ہے جسے باطل پہ کیوں نظر کرے
یار کو چھوڑ غیر سے کیسے وہ التجا کرے
5

اَے تُو اِنسان غمزدہ رَنج و بلا میں مبتلا
پاس شہ اَماں کے آ دُور تری بلا کرے
6

راہ اور حق و زندگی اِبن خُدا ہے اِک وہی
ہے وہ نجات و مخلصی بند سے وہ رہا کرے
7

صرف دُعا میں ہوں سدا تُجھ سے ہی اَے شہ سماَ
اُلفت کا تیری درد سا دِل میں مِرے رہا کرے

Scroll to Top